class="page-template-default page page-id-155 page-parent group-blog">
گلگت ، بگاردو تھنگ میں ہائی سکول کی پروجیکٹ کو روکنے والی بات میں کوئی حقیقت نہیں غلام شہزاد آغا ، وزیر تعلیم گلگت بلتستان کا صوبائی وزیر پلاننگ کے درمیان لفاظی جنگ شروع گلگت، چیف سیکریٹری کی ہدایت پر گلگت بلتستان بھر میں صفائی مہم کا باقاعدہ آغاز کر دیا گیا۔ شگر پی سی فور منظور ہونے کے باوجود انٹر کالج شگر سٹاف سے محروم ہے ۔ موجودہ سٹاف بڑی تندہی کیساتھ کالج کے نظام چلانے میں مصروف ہے. سماجی رہنماء علی محمد شگری شگر ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفس شگ میں لیڈی ہیلتھ ورکرز کو آر ایچ سی شگر نے مثبت انفرادی وسماجی روئے اور بہتر زندگی کے حوالے سے سیشن کا انعقاد اسکردو، الزہرا ایجوکیشن سسٹم اسکردو شہر کا ایک مثالی تعلیمی ادارہ ہے کلثوم ایلیاء شگری قومی اسمبلی کے اسپیکر کا دبنگ فیصلہ، صدر کی خطاب کے دوران ہنگامہ آرائی دو رکن اسمبلی پر پابندی عائد آئی سی سی T20 ورلڈ کپ 2024 میں کون جیتے گا کونسے ٹیم فیورٹ پیشن گوئیاں شروع گلگت، ہم خیال گروپ کے رکن گلگت بلتستان اسمبلی راجہ اعظم خان اور اسلامی تحریک پاکستان صوبائی حکومت کا حصہ ہو گا، ترجمان برائے وزیر اعلی گلگت بلتستان فیض اللہ فراق شگر ایس پی شگر شیرآحمد کے زیر صدارت ایک اعلی سطحی اجلاس ایس پی آفس شگر میں منعقد ہوئی اسسٹنٹ کمشنر شگر اصغر خان احمد نے پرائمری سکول سینکھور مرکنجہ شگر کا دورہ کیا

Home

افغانستان میں طالبان اقتدار میں آنے کے بعد پہلی سرعام پھانسی ۔

طالبان نے بدھ کے روز ایک مبینہ قاتل کو افغانستان میں اسلام پسند گروپ کے اقتدار میں آنے کے بعد پہلی بار سرعام پھانسی دے دی۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ اس شخص کو اس کے مبینہ مقتول کے والد نے جنوب مغربی صوبے فرح میں ایک پھانسی کے موقع پر تین گولیاں ماری تھیں جس میں طالبان کے سینئر حکام نے شرکت کی تھی۔ اس شخص پر 2017 میں متاثرہ کو چھرا گھونپ کر ہلاک کرنے اور سیل فون اور سائیکل چوری کرنے کا الزام تھا۔

یہ خبر صرف چند ہفتوں کے بعد سامنے آئی جب طالبان نے ججوں کو شرعی قانون کی اپنی تشریح کو مکمل طور پر نافذ کرنے کا حکم دیا تھا، جس میں سرعام پھانسی، کٹوتی اور کوڑے شامل ہیں۔

اگست 2021 میں ملک سے امریکی افواج کے انخلاء کے بعد کابل طالبان کے قبضے میں آنے کے بعد یہ پہلی سرعام پھانسی ہے۔

طالبان کے مطابق ملزم نے قتل کا اعتراف کر لیا تھا اور کیس کی تین مختلف عدالتوں میں سماعت ہوئی تھی۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ افغانستان کے سپریم لیڈر علیقدر امیر المومنین نے پھانسی کی حتمی منظوری دی۔